Submit your work, meet writers and drop the ads. Become a member
Arshia Qasim Apr 2017
یقینوں کی سرحد، سوالوں سے آگے
گمانوں سے اوپر، خیالوں سے آگے
حقیقت کی پہچان باطن سے جاگے
دلیلوں سے بالا، حوالوں سے آگے
مری سوچ کی جس جگہ انتہا ہے
جلایت سماوی، تپش منتہیٰ ہے
ذرائع ، وسیلے، نشاں, استعارے
قدم دو قدم ساتھ چلتے سہارے
سبھی راستوں پر توکل زمینیں
سبھی گردشوں میں مقابل جبینیں
ہجومِ سلاسل میں قلبِ مجرد
جہاں نہ رسائی ہو ایسی وہ خلوت
وہاں کوئی نفسی، خودی، نہ انا ہے
مری سوچ کی جس جگہ انتہا ہے
وہاں پر خدا ہے، وہاں بھی خدا ہے

ع
۱۰۔۳۔۱۷

The dominion of faith is beyond the line of questions
Above the strata of  probabilities
Ahead of the limits of imaginations
Recognition of truth arises from within
Independent of reasoning and evidence
Unaffected by references and certifications.
Where is the boundary of my awareness?
Heavenly light, infinite candescence  
Resources, means, symbolisms, provenance
Temporary camaraderies and companionships...
On all paths, the ground is made of tawakul
In all circumvolutions, brows are directed centrally
In the swarm of connectivity, the core remains vacant
Where nothing can reach, such is the solitude there
Where there is no person, no self, no ego
Where there is the boundary of my awareness
There is God! There, too, is God.

A
10.3.17
Arshia Qasim Apr 2017
آج کوئی حال پوچھے تو کہوں

بھر چکا ہے دل جوابوں سے مرا
ہے مزین سچ سرابوں سے مرا
اپنے اندر سے میں باہر دیکھتی ہوں
زاویہ مخفی حجابوں سے مرا
یوں بھی ہو خود سے نکل پاؤں کبھی
موم کے شیشے پگھل جائیں سبھی
نور ہے پر اس کے نیچے راکھ ہے
خاک سے کھرچی ہوئی یہ خاک ہے
گو طلاعی ہے چمک اس سوچ کی
کھوکھلی ہے، اس کے اندر لاکھ ہے
کیمیا گر کی ہتھیلی پر اُگی
پھونک کے زد میں یہ اپنی ساکھ ہے
کب تلک اپنے تقرب سے بچوں
کب تلک اپنے تعین سے جچوں
سننے والے ہوں اگر تو بول دوں
قفل ان سب طائروں کے کھول دوں
ورنہ یہ بھی عین ممکن ہی تو ہے
انکہی اک داستاں میں میں رہوں ۔۔۔۔۔
آج کوئی حال پوچھے تو کہوں

ع
۱۳۔۳۔۱۷

My heart is done with answers
My truth is with mirages, adorned
I look from within myself outside
A perspective, on obscurities formed

Maybe I can get out of myself
Maybe the walls of wax can melt
There is light but underneath are ashes
Dust that has been scraped off from dust
Though the shine of thought is like gold
They're hollow, and only filled with gust
Grown on the palm of the alchemist
My facade is in the target of a single breath

How long should I avoid facing the mirror  
How long should I render embellishments
to my impressions
If there are hearers, I can speak
I can unleash the trail of what I seek

Or otherwise this is entirely possible
That it all remains hidden
in the epic never bared
But if one were to ask today,
I would have shared.
Arshia Qasim Apr 2017
خوبصورت نظر سے جو دیکھے
خوبصورت نظر دکھاتی ہے
شش جہت میں وہی سنائی دے
جو صدا اپنے من سے آتی ہے!
ع
۱۴۔۳۔۱۷

The sight that chooses to see beauty
Is the sight where beauty finds her place
The sound that stirs from within one's core
Is the sound that echos in every space
A
14.3.17

— The End —