Submit your work, meet writers and drop the ads. Become a member
Jul 21
اب تو آنکھوں سے پلایا جاۓ
ان کی زلفوں پے لٹایا جاۓ
لمس میں ان کے بجلیاں صدہا
پس کہ خرمن کو جلایا جاۓ
میں عدم میں ،وہ منتظر میرا
کاش اک بار جگایا جاۓ
غاصبوں نے قلم بھی  چھین لیا
اب کے نشتر ہی اٹھایا جاۓ
بھر گیا دل تری کرامت سے
اب نہ اعجاز دکھایا جاۓ
پس کہ کہنے کو کیا رہا باقی
نام ارسل کا مٹایا جاۓ
Arslan Baloch Arsal
Written by
Arslan Baloch Arsal  29/M/Regina , Saskatchewan
(29/M/Regina , Saskatchewan)   
  155
 
Please log in to view and add comments on poems